QURBANI KE MASAIL PART 4

 

قربانی کے مسائل 

مسئلہ 16:  یہ ضرورنہیں  کہ دسویں  ہی کو قربانی کر ڈالے اس کے لیے گنجائش ہے کہ پورے وقت میں جب چاہے کرے لہٰذا اگر ابتدائے وقت میں  اس کا اہل نہ تھا وجوب کے شرائط نہیں  پائے جاتے تھے اور آخر وقت میں  اہل ہوگیا یعنی وجوب کے شرائط پائے گئے تو اوس پر واجب ہوگئی اور اگر ابتدائے وقت میں  واجب تھی اور ابھی کی نہیں  اور آخر وقت میں  شرائط جاتے رہے تو واجب نہ رہی۔(عالمگیری)


مسئلہ 17:  ایک شخص فقیر تھا مگر اوس نے قربانی کر ڈالی اس کے بعد ابھی وقت قربانی کا باقی تھا کہ غنی ہوگیا تو اوس کو پھر قربانی کرنی چاہیے کہ پہلے جو کی تھی وہ واجب نہ تھی اور اب واجب ہے بعض علماء نے فرمایا کہ وہ پہلی قربانی کافی ہے اور اگر باوجود مالک نصاب ہونے کے اوس نے قربانی نہ کی اور وقت ختم ہونے کے بعد فقیر ہوگیا تو اوس پر بکری کی قیمت کا صدقہ کرنا واجب ہے یعنی وقت گزرنے کے بعد قربانی ساقط نہیں  ہوگی۔ اور اگر مالک نصاب بغیر قربانی کیے ہوئے انھیں  دنوں  میں  مرگیا تو اوس کی قربانی ساقط ہوگئی۔(عالمگیری، درمختار)

مسئلہ 18:  قربانی کے وقت میں  قربانی کرنا ہی لازم ہے کوئی دوسری چیز اس کے قائم مقام نہیں  ہوسکتی مثلاً بجائے قربانی اوس نے بکری یا اس کی قیمت صدقہ کر دی یہ ناکافی ہے اس میں  نیابت ہوسکتی ہے یعنی خود کرنا ضرور نہیں  بلکہ دوسرے کو اجازت دے دی اوس نے کر دی یہ ہوسکتا ہے۔ (عالمگیری)

مسئلہ 19:  جب قربانی کے شرائط مذکورہ پائے جائیں  تو بکری کا ذبح کرنا یا اونٹ یا گائے کا ساتواں  حصہ واجب ہے۔ ساتویں  حصہ سے کم نہیں  ہوسکتا بلکہ اونٹ یا گائے کے شرکامیں  اگر کسی شریک کا ساتویں  حصہ سے کم ہے تو کسی کی قربانی نہیں  ہوئی یعنی جس کا ساتواں  حصہ یا اس سے زیادہ ہے اوس کی بھی قربانی نہیں  ہوئی۔ گائے یا اونٹ میں  ساتویں  حصہ سے زیادہ کی قربانی ہوسکتی ہے۔ مثلاً گائے کو چھ یا پانچ یا چار شخصوں  کی طرف سے قربانی کریں  ہوسکتا ہے اور یہ ضرور نہیں  کہ سب شرکا کے حصے برابر ہوں  بلکہ کم و بیش بھی ہوسکتے ہیں  ہاں  یہ ضرورہے کہ جس کا حصہ کم ہے تو ساتویں  حصہ سے کم نہ ہو۔ (درمختار، ردالمحتار)

مسئلہ 20:  سات شخصوں  نے پانچ گایوں  کی قربانی کی یہ جائز ہے کہ ہر گائے میں  ہر شخص کا ساتواں  حصہ ہوا اور آٹھ شخصوں  نے پانچ یا چھ گایوں  میں  بحصۂ مساوی شرکت کی یہ ناجائز ہے کہ ہر گائے میں  ہر ایک کا ساتویں  حصہ سے کم ہے۔ سات بکریوں  کی سات شخصوں  نے شریک ہو کر قربانی کی یعنی ہر ایک کا ہر بکری میں  ساتواں  حصہ ہے استحساناً قربانی ہو جائے گی یعنی ہر ایک کی ایک ایک بکری پوری قرار دی جائے گی۔ یوہیں  دو شخصوں  نے دو بکریوں  میں  شرکت کر کے قربانی کی تو بطور استحسان ہر ایک کی قربانی ہو جائے گی۔ 

مسئلہ 21:  شرکت میں  گائے کی قربانی ہوئی تو ضرور ہے کہ گوشت وزن کر کے تقسیم کیا جائے اندازہ سے تقسیم نہ ہوکیونکہ ہوسکتا ہے کہ کسی کو زائد یا کم ملے اور یہ ناجائز ہے یہاں  یہ خیال نہ کیا جائے کہ کم و بیش ہوگا تو ہر ایک اس کو دوسرے کے لیے جائز کر دے گا کہہ دے گا کہ اگر کسی کو زائد پہنچ گیا ہے تو معاف کیا کہ یہاں  عدم جواز حق شرع ہے اور ان کو اس کے معاف کرنے کا حق نہیں ۔(درمختار، ردالمحتار)

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے